اخلاق و کردار کے پیکر رضا سرسوی

تحریر: مولانا تقی عباس رضوی کلکتوی

حوزہ نیوز ایجنسی

آتی رہے گی تیرے انفاس کی خوشبو

گلشن تیری یادوں کا مہکتا ہی رہے گا

شاعر اہل بیت (ع)جناب رضا سرسوی صاحب اعلی اللہ مقامہ کی وفات حسرت آیات اور سانحہ ارتحال سے مذہب تشیع کو زبردست دھچکا لگا ہے۔

مرحوم ایک ،شستہ و شگفتہ اخلاق کے حامل، وجیہ وپروقار، متقی و پر ہیز گار،صاحب دل وصاحب حال علم وفن کے سفیر،اپنی ذات میں بے نظیر،دین اسلام کے مخلص و ہمدرد اور اہل بیت رسول کے وفادار اور شیدایی تھےجو ایک عمر اپنی متحرک شخصیت کی خوشبوؤں سے اور اپنی دلنشیں، نازک مزاج اور گل افشاں شاعری سے ملک و بیرون ملک خاص کر سرزمین سرسی سادات کو مزید معطر کرتے ہوئے جنت کی خوشبوؤں میں جا ملے۔
 
حق تعالی حضرت علیہ الرحمہ کی دینی مساعی کو قبول فرمائے اور اپنی رضاء و رحمت اور آخرت کی راحت و سعادت سے ہمکنار کرے۔

ہم اس سانحہ ارتحال پر تمام سوگوار و لواحقین کی خدمت میں تسلیت و تعزیت پیش کرتے ہوئے  بارگاہِ خداوندی میں دعا گو  ہیں کہ خداوندعالم آپ سبھی حضرات بالخصوص پسماندگان کو صبر جمیل عطا فرمائے آمین ثم آمین
 

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

This website uses cookies to improve your experience. We'll assume you're ok with this, but you can opt-out if you wish. Accept Read More