کیا سحر کا مشاھده کرنا اور اس کے بارے میں مطالعھ کرنا حرام ھے۔

0 0

180x480 Banner

اسلام میں ، سحر کا انجام دینا ، سیکھنا ، سکھانا اور اس سے روٹی روزی کمانا حرام ھے[1]۔ اسلام میں اسے گناھان کبیره میں شمار کیا گیا ھے۔ بعض روایا ت میں سحر کی تعلیم اور تعُّلم کو کفر کا موجب بتایا گیا ھے۔ سحر بھت سارے مواقع پر ، لوگوں کو گمراه کرنے اور حقایق کی تحریف اور ساده ذھن افراد کے اعتقادات کی بنیادوں کو سست کرنے کا باعث بنتا ھے ۔ البتھ دوسرے الھی احکام کے مانند اس حکم کے بھی بعض مستثنیات موارد بیان ھوئے ھیں۔ ان میں سے سحر باطل کرنے کی غرض سے سحر کو   سیکھنا ، یا ان کے اثرات کو مٹانا جن کو سحر سے تکلیف پھنچتی ھے۔ یا نبوت کے جھوٹےمدعین کے دعوی کو باطل کرنے کے مواقع شامل ھیں۔

ساحروں کی کتابوں کا مطالعھ کرنا یا ان کے کاموں کا مشاھده کرنا یا ٹی وی یا سینما میں ان کے کرتوت کو دیکھنا اگر سیکھنے کی غرض سے نھ ھو بلکھ صرف ایک تفریح اور سرگرمی کیلئے ھو تو اس صورت میں اشکال نھیں ھے ۔ [2] مگر یھ کھ دوسرے عناوین اس پر منطبق آجائیں۔ جیسے فلم یا کتاب ایسی ھو جس کے ذریعے فرد پر منفی اثرات پڑ جائے یا اس کی گمراھی کا موجب بنے یا ان کتابوں یا فلموں کا رکھنا ، کتب ضلال کے زمرے میں قرار پائے یا سحر کی ترویج کا سبب بنے تو اس لحاظ سے اس میں اشکال ھے اور وه حرام ھے۔


مزید  کیا جسم پر ان مٹ نقوش گودنا حرام هے؟

[1]  تحریر الوسیلۃ ، ج ۱ ص ۳۸۹۔ مسئلھ ۱۶ حکم سحر وراه ابطال آن ، سوال 2022۔ ( سائٹ نمبر ۲۰۶۸)

[2]  پس اگر فلم کے دیکھنے یا کتاب کے پڑھنے پر سیکھنے کا عنوان صادق آجائے ، یعنی فرد فلم کے دیکھنے یا کتاب پڑھنے سے سحر سیکھے ۔ تو یھ حرام ھوگا۔

120x240 Banner - 2

300x250 Banner

تبصرے
Loading...