امام زمانہ عجل اللہ فرجہ الشریف کہاں مقیم ہیں اور آنحضرت کوکون سے افراد دیکھتے ہیں؟

امام زمانہ عجل اللہ فرجہ الشریف کہاں مقیم ہیں اور آنحضرت کوکون سے افراد دیکھتے ہیں؟

امام  زمانہ  عجل  اللہ  فرجہ  الشریف  کہاں  مقیم  ہیں  اور 

آنحضرت  کوکون  سے  افراد  دیکھتے ہیں؟

ویب  سائٹ «الف» میں  لکھتے  ہیں :

قرآن کریم کا  سرچشمہ منبع الهٰی ہے  پس  ہم  مسلمانوں  پر  واجب  ہے  کہ  اس  کی  اطاعت  کریں۔ 

قرآن  میں  بیان  ہونے  والے  مسائل  میں  سے  ایک  اہم  مسئلہ  حضرت امام  مهدی عجل الله تعالي فرجه الشريف کا  عالمی  قیام  ہے  کہ  دنیا  ظلم  و  استبداد  سے  بھر  جانے  کے  بعد  ایک  بار  پھر  عدل  و  انصاف  کے  گہواے  میں  بدل  جائے  گی  اور  پھر  عالمی  قیام  عمل  میں  آئے  گا۔

دنیا  سےظلم  و  تباہی  کا  خاتمہ  ہونا  چاہئے  تا  کہ  دنیا  عدل  و  انصاف  سے  بھر  جائے۔ایسا  نہیں  ہے  جیسا    کہ  بعض  مصنفین  کی  خام  خیالی  ہے  کہ  حضرت  امام  مہدی  عجل  اللہ  تعالیٰ  فرجہ  الشریف  کی  حکومت  میں  عدالت  کا  غلبہ  ہو  گا  لیکن  اس  کے  باوجود پھر  بھی  معاشرے  میں   کچھ  شرّ  پسند  افراد  پائے  جائیں  گے۔ (۱)

اب  سوال  یہ  پیدا  ہوتا  ہے که:

امام  زمانہ  عجل  اللہ  فرجہ  الشریف  کہاں 

مقیم  ہیں  اور  کون  لوگ  آنحضرت  کو  دیکھتے ہیں؟

بزرگ  عالم  دین  جناب سید مرتضی مجتهدی سیستانی (آیت الله سیستانی کے  بھتیجے) حضرت مهدی عجل الله تعالي فرجه الشريف کے  محبین  میں  سے  ایک کے  قول  کے  بارے  میں  کہتے  ہیں:

اس علم کے  رموز  سے  استفادہ  کرتے  ہوئے  جب امام زمانہ عجل الله تعالي فرجه الشريف کی رہائشگاہ    کے  بارے  میں پوچھا  گیا  تو  اس  علم  یہ  جواب  حاصل  ہوا:

« فی دارالنعيم فی جزیرة الخضراء »؛ 

 یعنی : جزیره خضراء  میں  نعمتوں  کے  گھر  میں۔

لیکن  دوسرے  سوال  کے  جواب  میں  (یعنی امام زمانہ عجل الله تعالي فرجه الشريف کون  کون  دیکھ سکتا  ہے) آپ  کے  لئے  یہ  واقعہ  نقل  کرنا  مناسب  سمجھتا  ہوں : احمد بن محمد بن یحیی الانباری (سال ۵۳۴)سے  نقل  ہوا  ہے  کہ:

جزیره خضراء کی  جامع  مسجد  میں  بہت زیادہ جماعت کو  دیکھا. میں  ان  میں  ایک  ایسے  شخص  کو  دیکھا  کہ  جو  بہت  رعب  اور  وقار  سے  بیٹھا  ہوا تھا۔میں  ان  کی  توصیف  بیان  نہیں  کر  سکتا۔لوگ  انہیں  سید  شمس  الدین  محمد  عالم  کہہ  رہے  تھے  اور  ان  سے  قرآن  اور  فقہ  کے  علوم  کی  تعلیم  حاصل  کر  رہے  تھے ۔جب  میں  ان  کے  ساتھ  پہلی  نماز  جمع  پڑھی  تو  میں  دیکھا  کہ  انہوں  نے  نماز  جمعہ  کی  دو  رکعت  کو  واجب  کی  نیت  سے  پڑھا  ہے۔جب  وہ  نماز  سے  فارغ  ہوئے  تو  میں  نے  کہا:«اے  میرے سید! میں  نے  دیکھا  ہے  کہ  آپ  نے  نماز  جمعہ  واجب  کی  نیت  سے  پڑھی  ہے »

فرمایا : « ہاں! کیونکہ  اس  کی  تمام  شرائط  موجود  ہیں.»

میں  نے  اپنے  آپ  سے  کہا: شاید امام زمانہ  عليه السلام حاضر ہوں.

لہذا میں  نے  کسی  اور  وقت  ان  سے  سوال  کیا  کہ:کیاامام زمانہ  عليه السلام حاضر تھے؟

فرمایا : نہیں! لیکن  میں  آنحضرت  کا  نائب  خاص  ہوں  اور  میں  نے  آنحضرت  کے  حکم  سے  ہی  نماز  جمعہ  قائم  کی  تھی۔

میں  نےعرض کیا : اے میرےسید! کیاآپ  نے امام زمانہ  علیہ  السلام  کی  زیارت  کی  ہے؟

فرمایا : نہیں! لیکن میرے  باپ  نے  مجھے  حکم  دیا  ہے  کیونکہ  وہ  امام عليه السلام کے  سخن  کو  سنتے تھے  لیکن  آنحضرت  کو  دیکھ  نہیں  سکتے  تھے  اور  میرے  داد  امام عليه السلام کے  سخن  بھی  سنتے  تھے  اور  دیکھتے  بھی  تھے۔

میں  نےعرض کیا :اے  میرے  سید! اس  کی  کیا  وجہ  ہے  کہ  کچھ  لوگ  دیکھ  سکتے  ہیں  اور  کچھ  نہیں  دیکھ  سکتے؟

فرمایا : اے بھائی! خداوند تعالی اپنے  بندوں  میں  سے  جس  پر  چاہتا  ہے  اپنافضل کرتا  ہے  اور  یہ  خدائے  سبحان  کی  عظیم  حکمتوں  میں  سے  ایک  ہے۔جیسا که  خدائے تعالی نے  اپنی  مخلوقات  میں  سے  کچھ  برگزیدہ  افراد  کو  منتخب  کیا  اور  اور  انہیں  نبوت  و  رسالت  اور  خلافت  سے  مخصوص  قرار  دیا  اور  انہیں  اپنی دوسری  مخلوق  کے  لئے  ہادی  و  رہنما بنایا  اور  اپنی  مخلوق  کے  لئے  حجت  قرار  دیا  اور  انہیں  اپنے  اور  اپنی  امت  مخلوق  کے  درمیان  وسیلہ  قرار  دیاتا  کہ  اگر  کوئی  ہلاک  و  گمراہ  ہو  تو  واضح  دلیل  و  برہان  سے  ہلاک  ہو  اور  اور  جو  زندہ  رہے  وپ  ہدایت  پا  جائے  اور  وہ  بھی  دلیل  و  برہان  سے  زندہ  رہے۔  خدا  زمین  کو  اپنی  حجت  سے  خالی  نہیں  رکھتا  اور  یہ  خدا  کا  اپنے  بندوں  پر  ایک  لطف  اور  احسان  ہے  کہ  اس  نے  لوگوں  کے  لئے  سفیر  و  حجت  قرار  دیئے  ہیں (2)

————————————————————————–

۱- کتاب نشانه های ظهور.

۲- کتاب گزارشاتی عجیب از محل زندگی فرزندان امام زمان عليه السلام.

 

منبع: جامعهٔ خبري و تحليلي الف

 

 

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

This website uses cookies to improve your experience. We'll assume you're ok with this, but you can opt-out if you wish. Accept Read More