عالمي پيمانے پر اسلامي تبليغ

0 0

بسم اللہ الرحمین الرحیم

”اِنَّاجَعَلْنَافِي اَعْنَاقِھِمْ اَغْلاَلاً فَھِيَ اِلَي الاَذْقَانِ فَھُمْ مُقْمَحُوْنَ وَجَعَلْنَامِن بَيْنِ اَيْدِيْھِمْ سَدًّاوَ مِن خَلْفِھِمْ سَدًّافَاَغْشَيْن?ھُم فَھُم لَايُبْصِرُونَ“(سورہ ي?سن ا?ية ??،?)

سماجي علوم کا کليہ ھے کہ انسان ايک اجتماعي مخلوق ھے اور وہ انفرادي طور پر زندگي نھيں گذار سکتا، وہ اجتماع ميں رہ کر قدم آگے بڑھاتا ھے ? اسي طرح ايک ملک بھي تنھاھي تنھانھيں رہ سکتا، اس کو اس کرئہ ارض (Globe) ميں رہ کر اس عالمي دنيا سے ملنا چاھئے ?

قرآن کھتا ھے ”اِنَّاجَعَلْنَا فِي اَعْنَاقِھِمْ اَغْلاَلاً فَھِيَ اِلَي الاَذْقَانِ فَھُمْ مُقْمَحُوْنَ“ ھم نے انک ي گردنوں ميں زنجيريں(chains) ڈال دي ھيں اور ظاھر ھے کہ يہ مادي زنجيريں نھيں ھيں، وہ زنجيريں ان کي ٹھڈيوں تک ا?گئي ھيں? ھمارے يھاں جنوبي ھندوستان ميں شادي کے موقع پر دولھا کي گردن ميں پھولوں کے ھارڈالے جاتے ھيں جو اس کے لئے ايک مصيبت بن جاتے ھيں کيوں کہ جب گلے ميں ھار ڈالتے ھيں تو ھار کے وزن کا تقاضا ھے کہ گردن جھکے ،دوسري طرف وہ گردن جھکانا نھيں چاھتا اور کوشش کرتا ھے کہ اسے اپني طبيعي حالت ميں رکھے ،ھار جتنے بڑھتے جاتے ھيں گردن کو سيدھي رکھنے کي کوشش ميں وہ اتنا ھي اکڑتا جاتا ھے، وہ در حقيقت اکڑنا نھيں چاھتا بلکہ صرف يہ چاھتاھے کہ اسکي گردن نہ جھکے? اورجب ھار بڑھتے بڑھتے ٹھڈيوں تک آجائيں تواس کا نتيجہ يہ ھوتاھے کہ وہ نہ اپنے سامنے ديکھ پاتا ھے اور نہ اپنے دائيں ?بائيں ?

دين اسلام نے ابتداء ھي سے جس بات کا بيڑا اٹھايا ھے وہ فکري جنگ ھے اس لئے کہ عمل فکر کا نتيجہ ھے اور فکر و ادراک ميں جتني تبديلي آتي جائے گي عمل ميں اتنا ھي فرق آتا جائے گا?

مزید  پیام کربلا:قیام واصلاح

يہ انساني تربيت کا ايک اصول ھے جسے ھم تربيت کے وقت بھول جاتے ھيں? شوھر اور بيوي کے درميان جھگڑے اسي لئے ھوتے ھيں کہ ھم ڈائرکٹ عمل پر حملہ (attack ) کرتے ھيں اور عمل کي تصحيح اس وقت تک ناممکن ھے جب تک فکر کي تصحيح نہ ھوجائے? قرا?ن ايک challenge ليکر ا?يا ھے جو ايک عالمي challenge ھے اور وہ يہ کہ قرآن تصحيح فکر کيلئے ا?يا ھے اور فکري تصحيح کے بعد عمل خود بخود صحيح ھو جائے گا? فکر ميں جتني گھرائي ھوگي عمل ميں اتنا ھي اخلاص ھوگا اسي لئے ھمارے يھاں احاديث ميں ملتا ھے ”تفکرساعة خيرمن عبادة سنة “يھاں تک کہ ”سبعين سنھ“? يعني ايک سال کي فکر ستر سال کي عبادتوں سے بھتر ھے ? اگر ھم اپنے اوپر سے پھلي زنجير اتار ديں اور يہ سمجہ ليں کہ اسلام ايک عالمي دين ھے ميرا فردي اور خانداني دين نھيں ھے اور ايک عالمي دين کيلئے عالمي تبليغ کي ضرورت ھے تو اس کے نتائج سامنے آئيں گے? اس کے لئے کام کي ضرورت ھے ھميں اپنے خول سے باھر آنے کي ضرورت ھے، ھميں اپنے ابريشم کے تاروں سے باھر آنے کي ضرورت ھے ?

ميں ايک ديھاتي آدمي ھوں پھلے ديھات ميں رھتا تھا اوراب بھي اس سے لگاو?ھے? بنگلور سے قريب علي پور ميرا گاؤں ھے جھاں زمينداري کے زمانے ميں ريشم کي بھي کاشت ھوتي تھي، شھتوت کے ايک پتےّ پر ريشم کے کيڑوں کے ھزاروں انڈے ھوتے ھيں اور تين دن کے بعد وہ انڈے باريک باريک کيڑوں کي شکل ميں تبديل ھوجاتے ھيں ? ??دن تک وہ کيڑے پتےّ کھاتے ھيں اوروہ جتنا زيادہ پتّے کھاتے ھيں اتناھي زيادہ ريشم اگلتے اور اتنا ھي اپنے بنائے ھوئے تاروں کے اندر مقيد ھوتے جاتے ھيں? وہ اپنے آپ کو اتنے مضبوط تاروں کے اندر مقيد کرليتے ھيں کہ ا?ج کي سائنٹفک دينا ميں بھي بلٹ پروف west bullet- proof اسي سے بنا يا جاتا ھے? ريشم کے ان تاروں سے کتنا مضبوط اور اچھا لباس تيار کيا جاتا ھے !اسي لئے مولااميرالمومنين (ع) نے فرمايا ھے کہ

مزید  اعتراض چند وجوھات سے مردود اور باطل ھے

دنيا کي بھترين غذا شھد اور بھترين لباس ريشم ھے اور دونوں کيڑوں کا تھوک ھيں پھر اس دنيا سے کيا محبت کريں?

اب اسي مثال سے ا?پ اندازہ لگائيں شايدھم سب کوجوسب سے بڑي پريشاني لاحق ھے وہ يہ ھے کہ ھم اپنے افکار کے ايسے ابريشم ميں مقيد ھيں جسے کسي اور نے نھيں بلکہ خو دھم نے تيارکياھے? اس کيڑے کي خوبي يہ ھے کہ جب وہ ريشم تھوکنا شروع کرتا ھے تو اسميں شروع سے ليکر آخر تک ايک ھي تار ھوتا ھے اسي لئے اس تار کو سات دن کے اندرھي ريشم کي شکل ميں نکال ليا جاتا ھے ورنہ اگرا?پ نے نھيںنکالا توساتويں دن وہ کيڑا تار کو کاٹ کر تتلي کي شکل ميں اڑجائيگا?

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.