رشد و کمالات میں اماموں کی انفرادیت

0 0

ہمارے بارہ کے بارہ اماموں میں سے ہر ایک کی منفرد خوبیاں ہیں ۔ اب پتہ نہیں جسارت ہے یا نہیں ؟ کہتے ہیں ” در مثل مناقشه نیست ” یعنی اگر کوئی کسی چیز کی مثال بیان کرنا چاہے تو اسے یہ نہیں کہنا چاہیۓ کہ یہ مثل اچھی ہے یا نہیں ۔ معلم جب کسی ضرب المثل یا کسی موضوع کو بیان کرنا چاہے تو اسے بچے کی عمر اور فہم کے لحاظ سے ہی اسے بیان کرنا پڑتا ہے ۔ ایک سات سال کے بچے یا دس سال کے بچے سے لے کر یونیورسٹی کے پروفیسر کے لیۓ تدبر کا انداز مختلف ہو گا ۔ فٹ بال کے کھیل میں گیا

ہمارے بارہ کے بارہ اماموں میں سے  ہر ایک  کی منفرد خوبیاں ہیں ۔ اب پتہ نہیں جسارت ہے یا نہیں ؟ کہتے ہیں ” در مثل مناقشه نیست “

یعنی اگر کوئی کسی چیز کی مثال بیان کرنا چاہے تو اسے یہ نہیں کہنا چاہیۓ کہ یہ مثل اچھی ہے یا نہیں ۔ معلم جب کسی  ضرب المثل یا کسی موضوع کو بیان کرنا چاہے تو  اسے بچے کی عمر اور فہم کے لحاظ سے ہی اسے بیان کرنا پڑتا ہے ۔ ایک سات سال کے بچے یا  دس سال کے بچے سے لے کر یونیورسٹی کے پروفیسر  کے لیۓ تدبر کا انداز مختلف ہو گا ۔

فٹ بال کے کھیل میں گیارہ کھلاڑی ہوتے ہیں ۔ ان  میں سے ہر ایک کھلاڑی کا کردار مختلف ہوتا ہے ۔ کوئی سر سے تو کوئی پاؤں سے فٹ بال کو اپنے قابو میں رکھتا ہے ۔ بہرحال  ان سب کا ھدف تو گول کرنا  ہی ہوتا ہے لیکن ان کی حرکات ایک طرح کی نہیں ہوتی ہیں ۔ ان میں سے ہر ایک  مخصوص قسم  کا وظیفہ انجام دیتا ہے اور آخر میں ایک  ھدف یعنی گول کرنے میں کامیابی حاصل کر لیتا ہے ۔

مزید  حضرت فاطمہ معصومہ (ع) کے فضائل و مناقب

اسی طرح  ہمارے اماموں نے بھی دین کی تبلیغ میں مختلف طرح کے وظا‌ئف انجام دیۓ ہیں ۔ ہر امام کا کردار دوسرے سے  کچھ مختلف ضرور تھا مگر  مقصد ایک تھا کہ دین اسلام کی خدمت کی  جاۓ ۔

 مثال کے طور پر انسان کے حالات بھی مختلف ہوتے ہیں یا تو برائیاں اس کے وجود کا منظم حصّہ بن چکی ہوتی ہیں یا نہیں ۔

حضرت امام سجاد علیہ السلام کی ایک دعا کا مفہوم ہے کہ  اے خدا !  اگر میرے اندر برائیاں رچ گئی ہیں  اور میری خصلت کا حصہ بن گئی ہیں تو میری اصلاح فرما دے ۔ اگر میں برا ہوں لیکن برائی میری روح میں زیادہ داخل  نہیں ہوئی ہے کہ میرے میرے نظام کا حصہ ہو کر میری فطرت بنے لیکن مجھ پر طاری ہے ۔ مجھے بدل دے اور خوبی میں تبدیل کر دے ۔

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.