حضرت ذَالكفل عليہ السلام

0 1

مشہور يہى ہے كہ وہ پيغمبروں ميں سے تھے اور ان كے نام كا سورہ انبياء كى ايت 85 ميں پيغمبروں كے ناموں كے ساتھ اسماعيل عليہ السلام اور ادريس عليہ السلام كے بعد ذكر اس معنى پر گواہ ہے _

بعض كا نظريہ يہ ہے كہ وہ بنى اسرائيل كے پيغمبروں ميں سے تھے، وہ انھيں ايوب عليہ السلام كا فرزند سمجھتے ہيں جس كا اصلى نام ”بشر” يا ”شرف” تھا، بعض انھيں ”حزقيل” سمجھتے ہيں كہ ذالكفل ان كے لقب كے طور پر مشہور ہو گيا ہے _

انھيں ذالكفل كا نام كيوں ديا گيا ہے ؟ اس بارے ميں اس بات كى طرف توجہ كرتے ہوئے كہ ”كفل” نصيب اور حصہ كے معنى ميں بھى ايا ہے اور كفالت و عہدہ دارى كے معنى ميں بھى علماء نے مختلف احتمال ذكر كئے ہيں _

كبھى تو يہ كہا ہے كہ چونكہ ا نھوں نے يہ عہد كيا ہے كہ راتوں كو عبادت كے لئے اٹھيں گے اور دن ميں روزہ ركھا كريںگے اور قضاوت اور فيصلہ كرتے وقت ہرگز غصے ميں نہ ائيں گے ااور وہ اپنے اس عہد و پيمان پر قائم  رہے لہذا انھيں يہ لقب ديا گيا _

كبھى يہ بھى كہا جا تا ہے كہ چونكہ انھوں نے بنى اسرائيل كے انبياء كے ايك گروہ كى كفالت كى تھى اور وقت كے ظالم بادشاہ سے ان كى جان بچائي تھى اس لئے انھيں يہ نام ديا گيا ہے _

بہرحال ان كى زندگى كے حالات كى اتنى ہى مقدار جو آج ہمارى دسترس ميں ہے، خدا كى اطاعت و بندگى اور ظالموں كے مقابلے ميں ان كى استقامت پامردى كى دليل ہے اور ہمارے اج اور كل كے لئے ايك سبق ہے _ اگر چہ ان كى زندگى كى تفصيلات كے بارے ميں زمانے كى دورى كے سبب دقيق طور پر فيصلہ نہيں كيا جا سكتا.

مزید  پھل اور فروٹ کی خصوصیات(حصہ پنجم)

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.