گناہان صغیرہ

ایک دن رسول اسلام صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم اپنے اصحاب کے ہمراہ ایک بےآب وگیاہ چٹیل میدان کی طرف روانہ ہوئے ۔ آپ جب وہاں پہنچے تو اپنے اصحاب کوحکم دیا کہ سب لوگ تھوڑی تھوڑی لکڑیاں لے آؤ ۔ اصحاب نے جواب دیا یارسول اللہ اس چٹیل میدان میں لکڑیاں کہاں ملیں گی ؟ آنحضرت نے فرمایا :تم می

ایک دن رسول اسلام صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم اپنے اصحاب کے ہمراہ ایک بےآب وگیاہ چٹیل میدان کی طرف روانہ ہوئے ۔ آپ جب وہاں پہنچے تو اپنے اصحاب کوحکم دیا کہ سب لوگ تھوڑی تھوڑی لکڑیاں لے آؤ ۔ اصحاب نے جواب دیا یارسول اللہ اس چٹیل میدان میں لکڑیاں کہاں ملیں گی ؟

آنحضرت نے فرمایا :تم میں سے ہرکسی کے پاس جتنی بھی توانائي ہے اپنی توانائی کے مطابق ہی سہی لکڑیاں لے آئے ۔ اس واقعہ کوبیان کرتے ہوئے امام جعفرصادق علیہ السلام کا ارشاد ہے کہ اصحاب پیغمبر لکڑیوں کی تلاش میں ادھر ادھر نکل گئے ۔ کچھ وقت گذرنے کے بعد ہرکوئی کچھ نہ کچھ لکڑیاں لے کرلوٹا اورحضرت ختمی مرتبت کے سامنے انھیں رکھ دیا  ۔ تھوڑی تھوڑی لکڑیاں اب دیکھنے میں بہت زیادہ ہوگئي تھیں ۔

حضرت رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے لکڑیوں کی طرف دیکھا اور فرمایا :جان لو کہ گناہ بھی اسی طرح ایک ایک کرکے زیادہ ہوجاتے ہيں ۔ اس کے بعد آپ نے وعظ ونصیحت کے عنوان سے اصحاب کوخطاب کرتے ہوئے فرمایا ! اپنے اپنے اعمال پر دھیان رکھو حتی چھوٹے چھوٹے اورمعمولی گنا ہ سے بھی پرہیزکرو ۔

اس کے بعد آنحضرت نےفرمایا :تمہارے تمام اعمال پرخواہ چھوٹے ہوں یا بڑے خداوندمتعال کی نظرہوتی ہے اوروہ سب کے سب تمہارے نامہ اعمال میں درج ہوتے ہیں ۔ جیسا کہ قرآن کریم میں خداوندعالم کا ارشاد ہوتا ہے ہم تمہارے تمام اعمال کا محاسبہ کریں گے ۔

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

This website uses cookies to improve your experience. We'll assume you're ok with this, but you can opt-out if you wish. Accept Read More