چند سوالات کے جوابات

چند سوالات کے جوابات

چند  سوالات  کےجوابات

از :م . قربانی کی  طرف  سے  المنجی  ویب  سائٹ  کے  لئے  :

سلام علیکم

1 – مہربانی  فرما  کر  امام  صادق  علیہ  السلام  سے  منقول  حدیث  جنودعقل  و  جہل  کا  متن  اور  ترجمہ  بیان  فرما  دیں۔

2 – کلمۀ «یصلح»   کے  اعراب  کے  بارے  میں  صحیفہ  مہدیہ  اور  دوسری  کتابوں  (جیسے  مفاتیح  الجنان)  میں  فرق  کو  بیان  کریں  کیا پاورقی  میں اس  کی  وضاحت  بیان  کرنا  بہتر  نہیں  ہے۔

3 –میری  نظر  میں امام  حسین  علیہ  السلام  کی  زیارت  عاشورہ  کے  اس  جملہ «أن یرزقنی طلب ثاری …» میں  کلمہ «ثارکم» صحیح  لگتا  ہے  اور  یہ  جملہ «طلب ثارک مع امام منصور…» بھی  اسی  مطلب  کی  تائید  کرتا  ہے۔

4 – امام  زمانہ  عجل  اللہ  فرجہ  الشریف  کی  کتاب  اور  دنیا  کا  مسخر  ہونا  کب  منتشر  ہو  گی؟میں  شدت  سے  اس  کتاب  کا  منتظر  ہوں۔

5 – کیا  آیت  اللہ  مجتهدی سیستانی سے  ملاقات  ممکن  ہے؟ میں  ان  سے  ملاقات  کا  مشتاق  ہوں؟ مہربانی  فرما  کر  راہنمائی  فرمائیں۔

……………………………………………………………………….

سلام علیکم

1 – حدیث جنود عقل وجهل کو  مرحوم کلینی نے کتاب شریف اصول کافی میں  نقل  کیا  ہے. آپ  اصول  کافی  کی  پہلی  جلد  اور  اس  کے  ترجمہ  کی  طرف  رجوع  کریں۔

2 – صلح یصلح کے  تین  وزن  نقل  ہوءے  ہیں: صَلَحَ یَصلُحُ ، صلُحَ یَصلُحُ ، صَلَحَ یَصلَحُ

مرحوم سید بن طاوس کی  کتاب مصباح الزائر اور مرحوم کفعمی کی  کتاب  البلد الامین اور المصباح  میں یہ  جمله «یصلح …» موجود  نہیں  ہے.

کتاب الصحیفة الصادقیه میں  یہ  جملہ  موجود  ہے  اور  اس  میں  اسی  طرح  سے  اعراب  ہیں  جیسا  کہ   کتاب صحیفه مهدیه ہے .

قابل  توجہ  یہ  ہے  کہ کتاب زاد المعاد (چاپ اسلامیه)  میں  بھی  یصلُحُ (ضمه  کے  ساتھ ) آیا  ہے اور  ظاهرا اس  دعا  کا  مدرک کتاب مفاتیح الجنان کے  لئے  ہے .

قابل  ذکر  ہے  کہ   یصلَحُ (فتح لام )که جو کتاب شریف مفاتیح الجنان میں  نقل  ہوا  ہے  ،وہ  غلط  نہیں  ہے   لیکن کتاب مجمع البحرین میں  اسے  تیسری  لغت  کے  عنوان  سے  تعبیر  کیا  گیا  ہے.

اس  بنا  پر  بہتر  ہے  که اس کلمه کو   زاد المعاد او ر  صحیفه مهدیه کی  طرح  یصلُحُ (ضم لام )  پڑھا  جاءے۔

3 – یہ جمله( ان یرزقنی طلب ثاری یا ثارکم)  بھی دعاووں  کی  کتابوں  میں مختلف نقل ہوا  ہے. کتاب المصباح المتهجد میں  مرحوم شیخ طوسی (جو  دعا  کی  قدیم  کتابوں  میں  سے  ہے) اور  کچھ  دوسرے  نسخوں  میں  ( ثاری ) اور  بعض  دوسرے  نسخوں  میں ( ثارکم ) نقل  ہوا  ہے۔ اس  بنا  پر  اسے  کسی  بھی  عبارت  سے  پڑھنا  صحیح  ہے۔

مرحوم علامه مجلسی نے  زاد المعاد «وان یرزقنی طلب ثاری مع امام مهدی ….» نقل کیا  ہے اور  دعاووں  کی  اکثر  قدیم  کتابوں  «امام مهدی» بھی  ذکر  کیا  گیا  ہے.

اگر  اس  سے  پہلے  اور  بعد  کی  عبارت  میں  ( لکم و منکم ) پر  غور  کیا  جاءے  تو  ممکن  ہے  کہ  ( ثارکم )  بهتر لگے  لیکن «ان یبلغنی المقام المحمود» پر  غور  کیا  جائے  اور  ( ثاری ) کے  معنی  پر  بھی  توجہ  کی  جاءے  تو (ثاری) کہنا  بہتر  ہے۔

ملاقات  کی  صورت  میں  اسے  مزید  تفصیل  سے  بیان  کیا  جائے  گا .

4 – ہماری  کچھ  کتابیں  تکمیل  کے  آخری  مراحل  میں  جو  انشاء الله جلد  چاپ  ہوں  گی.

5 – پہلے  سے  ہماہنگی  کی  صورت  میں  ملاقات  ممکن  ہے.

 

 

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

This website uses cookies to improve your experience. We'll assume you're ok with this, but you can opt-out if you wish. Accept Read More