2022 - 12 - 02 ساعت :
سوالات اور جواب

امام کے حکومت اور ولایت کو ھاتھ میں لینے کے عدم امکان کی صورت میں ، اس کا وجود کیسے مھربانی ھوسکتا ھے ؟

2021-08-09 070

urdu books to read

امام کے حکومت اور ولایت کو ھاتھ میں لینے کے عدم امکان کی صورت میں ، اس کا وجود کیسے مھربانی ھوسکتا ھے ؟

شیعه کھتے ھیں که : “ امامت واجب ھے ، کیونکه امام ، پیغمبر (ص ) کا جانشین ھوتا ھے اور اسلامی شریعت کا محافظ ھوتا ھے اور راه راست کی طرف مسلمانوں کی راھنمائی کرتا ھے اور احکام میں کم یا زیاده ھونے کی حفاظت کرتا ھے ۔ “

اور کھتے ھیں که : “ امام کو خداوند متعال کی طرف سے معین و منصوب ھونا چاھئے اور چونکه دنیا کو اس کی ضرورت ھوتی ھے ، اس لئے ایساھی ھونا چاھئے ، اس لئے امام کا معین و منصوب ھونا واجب ھے ۔ ۔ ۔ “ اور کھتے ھیں که : “ امامت اس لئے واجب ھے که یه خدا کی مھربانیوں میں سے ایک مھر بانی ھے ۔ ۔ ۔ جب لوگوں کا کوئی رھبر و راھنما ھو تو ظالموں کو ظلم کرنے سے روکتا ھے اور انھیں نیک کام انجام دینے پر مجبور کرتا ھے ، اور ان کو ظالموں کے شر سے محفوظ رکھتا ھے اور لوگ صلاح و نجات کے قریب ھو جاتے ھیں اور فساد سے دوری اختیار کرتے ھیں ، اور مھربانی اسی کو کھتے ھیں ۔ “ ان سے کھنا چاھئے که آپ کے باره اماموں میں سے حضرت علی (ع ) کے علاوه کسی کو حکومت اور فرمانروائی نھیں ملی ھے اور وه یه طاقت نھیں رکھتے تھے که ظالم کو ظلم کرنے سے روکتے اور لوگوں کو نیک کام انجام دینے پر مجبور کرتے اور انھیں شر اور برائیوں سے محفوظ رکھتے ! پس آپ کیوں ان کے بارے میں اس چیز کا کھوکھلا دعویٰ کرتے ھیں ، جس کی کوئی حقیقت نھیں ھے ؟

 

مختصر جواب

اللہ تعالیٰ کی حکمت کا تقاضا ہے کہ پیغمبروں کے مبعوث کرنے اور انبیاء کے مبعوث کرنے اور بنی نوع انسان کی روحانی ترقی کے اپنے مقصد کو حاصل کرنے کے لیے حضور اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کے زمانہ کے بعد ایسے امام مقرر کیے جائیں جو انبیاء کے آخری اور آخری نبی ہیں۔ آپ صلی اللہ علیہ وسلم کے بعد کے فرائض انجام دیں، انہیں لے آؤ۔ یہی وجہ ہے کہ شیعوں کا عقیدہ ہے کہ امام خدا کی طرف سے مقرر کیا جاتا ہے اور پیغمبر کے تمام عہدے اور فرائض (سوائے وحی حاصل کرنے کے) امام کے ذمہ ہیں، جس کی حکومت اور ظاہری خلافت اس کے فرائض میں سے ہے۔ اس اصول کے مطابق، معصوم امام علیہ السلام کا وجود فضل ہے۔ حالانکہ اس سے حکومت چھین لی گئی ہے۔

 

تفصیلی جواب

اہل سنت امام کے عہدوں کو ذمہ داری اور دنیاوی امور کی قیادت کا درجہ سمجھتے ہیں اور ان کا شمار سلطانوں اور بادشاہوں میں ہوتا ہے۔ لہٰذا ان کی نظر میں ایسے امام کا بنیادی کردار لوگوں پر حکومت کرنا اور ان کے دنیوی معاملات کو سلجھانا ہے جس کے لیے ظاہری حکومت کی ضرورت ہوتی ہے، پیغمبر کے عہدے، وحی حاصل کرنے کے علاوہ، معصوم امام کے ذمہ ہیں۔ اور اسی لیے امام کو بھی (گناہ، خطا اور غلطی سے) معصوم ہونا چاہیے اور چونکہ ایک معصوم انسان کی تشخیص انسانی استطاعت سے باہر ہے، اس لیے امام کو خدا کی طرف سے مقرر اور نصب کیا جاتا ہے۔ کیونکہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی رحلت کے ساتھ ہی قرآن کی نزول اور آیات ختم ہو گئی ہیں، لیکن امام کے دیگر سنگین اور اہم فرائض اور فرائض جیسے کہ دین کی حفاظت، لوگوں کی مذہبی حکومت، احکام کی وضاحت اور دین کے احکام، قرآن کی آیات کی تشریح، مذہبی شکوک و شبہات کو دور کرنا، لوگوں کو تعلیم دینا، نیکی کا حکم دینا اور برائی سے منع کرنا، اعلیٰ ترین سطح پر اور نازک نازک معاملات میں لوگوں (مسلمانوں) کو نصیحت کرنا، بے سہارا لوگوں کو پناہ دینا اور مصیبت زدہ، لوگوں کی رہنمائی کرنا، ان کے درمیان فیصلہ کرنا، حکومت کرنا اور…، بند نہیں ہونا چاہیے۔ ہاں امام کے فرائض میں سے ایک یہ ہے کہ وہ حکومت تشکیل دے اور اسلامی معاشرے کی قیادت سنبھالے، لیکن یہ امام کا وجودی فلسفہ نہیں ہے کہ جب وہ امام کا فلسفہ وجودی ختم ہوجائے۔ اسی کے ذریعہ سے شیعہ امامت کو دین کے اصولوں میں سے سمجھتے ہیں اور اس کے وجود کو خدا کے فضل کی بنیاد پر واجب سمجھتے ہیں۔[1]

 

ان عہدوں اور فرائض کے پیش نظر یہ ضروری ہے کہ امام کا وجود مکرم ہے اور لوگوں اور انسانی معاشرے کے لیے بہت سی نعمتوں کا حامل ہے، خواہ ان کے پاس حکومت اور اقتدار کیوں نہ ہو اور ان کی خلافت کا منصب غصب کر لیا گیا ہو۔

 

اس کے علاوہ وہ امام جو لوگوں کے درمیان ہوتا ہے اور ان کے ساتھ رہتا ہے اور ان کے علمی اور غیر سائنسی مسائل کو حل کرتا ہے، ان کی نیکی کی طرف رجحان اور برائی اور گناہ سے بچنے میں ایک موثر کردار ہے۔ قریب اور کھلا ہونے کے معنی فضل کے ہیں۔ [2] کیونکہ ائمہ معصومین (ع) معصوم ہیں۔ لیکن دوسرے بے قصور نہیں ہیں اور ہو سکتا ہے کہ جسمانی جبلتوں سے متاثر ہو کر انسانیت کی حرمت کو پامال کریں اور گناہ کریں اور ان کو انحراف سے روکنے کے لیے ہمیشہ کسی کی ضرورت ہو۔

 

حواله

مزید معلومات کے لیے انڈیکس دیکھیں: امامت کے عقلی اسباب، سوال 614 (ویب سائٹ: 671)۔

[1]مطہری، مرتضیٰ، کاموں کا مجموعہ، جلد 4، صفحہ 841-945، نواں ایڈیشن، صدرا، تہران، 2007۔

[2]حلی، حسن ابن یوسف، الالفین، ص 202، پہلا ایڈیشن، الالفین لائبریری، کویت، 1405ھ۔

غلام حیدر

Loading...
  • ×
    ورود / عضویت