سات سو روہنگيا مسلمان بے دخل

حکومت تھائي لينڈ نے پناہ کي تلاش ميں سمندري راستے سے آنے والے سات سو روہنگيا مسلمانوں کو بے دخل کرنے کا اعلان کرديا ہے-

جرمن نيوز ايجنسي کے مطابق تھائي پوليس کے سربراہ نے بتايا ہے کہ ميانمار کے روہنگيا مسلمانوں کي يہ تعداد غير قانوني طور پر ملک ميں داخل ہوئي ہے اور ہم انہيں بے دخل کرنے کا ارادہ رکھتے ہيں-

تھائي لينڈ کي پوليس نے جمعرات کے روز تين سو ستانوے روہنگيا مسلمانوں کو جنوبي تھائي لينڈ ميں انساني اسمگلروں کے قبضے سے رہا کرايا تھا جبکہ اس علاقے کي ايک مسجد ميں پناہ ليئے ہوئے تين سو سات ديگر روہنگيا مسلمانوں کو گرفتار کرليا تھا- انساني حقوق کي عالمي تنظيموں نے حکومت تھائي لينڈ کے اس فيصلے پر کڑي نکتہ چيني کي ہے-

واضح رہے کہ ميانمار کے روہگيا کہلائے جانے والے مسلمانوں کو مقامي آبادي اور حکومت کي جانب سے تشدد اور امتيازي سلوک کا سامنا ہے جس کے تنيجے ميں ان کي بہت بڑي تعداد ملک سے فرار ہوکر ديگر ملکوں ميں پناہ لينے پر مجبور ہيں-

تبصرے
Loading...