ایران کے خلاف امریکی پابندیوں کی مذمت کرتے ہیں،چین

چين نے ايک بار پھر ايران کے خلاف امريکا کي غير قانوني اور يکطرفہ پابنديوں کي مذمت کي ہے۔

چين کي وزارت خارجہ کي ترجمان نے ايران کے خلاف امريکا کي مخاصمانہ پاليسيوں پر شديد تنقيد کرتے ہوئے کہا کہ بيجنگ ايران کے خلاف امريکا کي شکست خوردہ اور لاحاصل پابنديوں کے مقابلے ميں ڈٹا ہواہے۔

چيني وزارت خارجہ کي ترجمان نے کہا کہ ان کا ملک ايران جيسے آزاد و خود مختار ملک کي حمايت کرتا ہے۔

چين کي وزارت خارجہ کي ترجمان ہوا چونگ يينگ نے کہاکہ انکا ملک ايران اور ديگر ملکوں کے خلاف امريکا اور مغرب کي يکطرفہ پابنديوں کي سختي سے مخالفت کرتا ہے۔

چيني وزارت خارجہ نے کہا کہ بيجنگ ايران کے ايٹمي معاملے پر ايران اور پانچ جمع ايک گروپ کے درميان مذاکرات شروع کئے جانے کا خواہاں ہے۔ چيني وزارت خارجہ کی ترجمان کا يہ بيان ايک ايسے وقت آيا ہے جب امريکي صدر باراک اوباما نے ايران کے خلاف نئي پابنديوں کے مسودے پر دستخط کردئے ہيں۔ امريکا اس طرح کي غير قانوني پابنديوں کے ذريعے ايران کي پرامن ايٹمي سرگرميوں کو روکنا چاہتا ہے۔ ايران کے خلاف امريکا کي تازہ ترين پابندياں ايران کے اقتصادي شعبوں اور ذرائع ابلاغ پر لگائي گئي ہيں۔

امريکا ايران کي پرامن ايٹمي سرگرميوں کي ايسے وقت ميں مخالفت کررہا ہے جب وہ غاصب صہيوني حکومت کے ايٹمي ہتھياروں کي حفاظت کرتا ہے۔

اسرائيل مشرق وسطي شمالي افريقہ اور مغربي ايشيا ميں ايٹمي ہتھيار رکھنےوالي واحد حکومت ہے اور وہ اپني ايٹمي تنصيبات کے دروازے عالمي معائنہ کاروں کے لئے کھولنے کو بھي تيار نہيں ہے۔

تبصرے
Loading...