والدین کی طرف سے نیابتی نماز کس صورت میں پڑھی جا سکتی هے؟

0 0

زنده انسان کے لئے نماز و روزه کے لئے نائب بنانا جائز نهیں هے ، هر مکلف پر واجب هے که وه اپنی واجب نمازوں کو کسی بھی طرح ( کھڑے هوکر ، ﺑﻴﮣﮭ کر ، لیٹ کر یهاں تک که اشاره سے ) خود هی پڑھے ۔

امام خمینی (ره) اور دوسرے تمام مراجع فرماتے هیں :

(( جب تک انسان ﺑﻴﮣﮭ سکتا هے بیٹھ کے لیکن اگر کسی بھی طرح ﺑﻴﮣﮭ نهیں سکتا تو داهنی جانب لی جائے اگر نه هوسکے تو بائیں جانب اور اگر یه بھی ممکن نه هوتو پشت کے بل لیٹ جائے اس طرح کے پاؤں کے تلوے قبله کی طرف هوں ))[1]

اسی طرح اپنی تمام واجب عبادتیں جنھیں انجام نهیں دیا هے ۔ اسے چاهئے که اپنی زندگی

میں هی قضا کرے ؛ امام خمینی (ره) اور دوسرے مراجع اس سلسله میں فرماتے هیں : جب

تک انسان زنده هے اگر چه وه اپنی قضا نمازیں پڑھنے سے عاجز هی کیوں نه هو دوسرا کوئی

شخص اس کی قضا نمازیں نهیں پڑھ سکتا هے [2] ۔ لهذ ا جب تک والدین زنده هیں ان کی طرف

سے نیابت میں واجب نمازوں کو ادا نهیں کیا جا سکتا ، لیکن ان کی طرف سے مستحب نمازیں

پڑھنا صحیح هے ۔



[1]  توضیح المسائل (المحشی للامام الخمینی )، ج 1 ، ص 541 ، مسئله 971

[2]  توضیح المسائل (المحشی للامام الخمینی )، ج 1 ، ص 757 ، مسئله 1387

مزید  نماز کے معنی اور اس کے اثرات کیا ھیں ؟
تبصرے
Loading...