میں نے اپنے باپ کی زندگی میں، اپنے کچھه پیسوں سے ان کے مکان کی تعمیر میں اضافه کیا هے- کیا اس وقت ان کی وفات کے بعد ان کے مال سے وه رقم اٹھا سکتا هوں جو میں نے ان کے مکان کی تعمیر میں خرچ کی هے؟

0 0

اس مسئله کے سلسله میں چند مفروضات قابل تصور هیں، جن کے مطابق جواب دیا جا سکتا هے:

۱۔ مکان کی تعمیر کے سلسله میں خرچ کی گئی رقم اگر آپ نے اپنے باپ یا کسی رشته دار، جیسے، بھائی یا بهنوں کو بخش دی هو، تو اس صورت میں اسے واپس نهیں لے سکتے هیں، کیونکه رشته داروں میں سے کسی کو هدیه کی گئی چیز کو واپس نهیں لیا جا سکتا هے-

امام خمینی رح فرماتے هیں: “اگر رشته داروں میں سے کسی کو جیسے باپ، ماں یا فرزند یا کسی دوسرے رشته دار کو کوئی چیز هدیه کے طور پر دی جائے اور اس هدیه کو وه وصول کرلے، تو هدیه کرنے والے کو اسے واپس لینے کا حق نهیں هے[1] -“

۲۔ لیکن اگر آپ نے اس مکان پر خرچ کی گئی رقم اپنے باپ کو قرضه کے طور پر دی هو تو آپ اس رقم کا تقاضا کر کے اسے وراثت سے الگ کر سکتے هیں-

۳۔ اگر آپ کا یه کام هدیه نهیں تھا، بلکه اس مکان کے حقیقی مالک یعنی آپ کے باپ نے آپ کو اجازت دی هو که اُن کے مکان میں دو کمروں کا اضافه کریں، اس معنی میں که زمین آپ کو نه بخشی گئی هو، بلکه اس میں صرف تصرف کرنے کی آپ کو اجازت دی هو، تو اس صورت میں اُن کے وارثوں کو اجازت دینے یا اسے مسترد کرنے کا حق پهنچتا هے، اگر انهوں نے اجازت دے دی که عمارت اپنی موجوده صورت میں باقی رهے، تو مشکل حل هو گئ هے اور اس مکان میں اضافه کئے گئے کمرے آپ کے هی هیں، لیکن اگر انهوں نے اجازت نهیں دی تو وه آپ سے کهه سکتے هیں که اپنے دو کمروں کو منهدم کر کے اس کے سامان کو اٹھا لے جائیں، کیونکه اس میں آپ کا تصرف آپ کے باپ کی اجازت سے تھا، اس لئے اگر مکان یا زمین کو کوئی نقصان پهنچا تو آپ اس کے ضامن نهیں هیں-

لیکن اگر آپ کا تصرف آپ کے باپ کی اجازت سے نهیں تھا تو آپ کو نقصان پورا کرنا پڑے گا-

چونکه یه مسئله قدرے پیچیده هے، اس لئے هماری نظر میں بهتر هے که مسئله کو اپنے بھائی بهنوں سے صلح و صفائی کے ذریعه حل کیا جائے تاکه سب کی رضامندی حاصل کی جا سکے یا یه که اپنے مرجع تقلید سے رابطه برقرار کر کے مسئله کے جزئیات کو اُن پر واضح کیجئیے تاکه وه آپ کو تفصیلی جواب دے سکیں-


مزید  بعض کتابوں میں لکھا گیا هے که بعض افراد جوانى میں گناه کے مرتکب هوتے تھے لیکن بعد میں ان کے دلوں میں نور الهى متجلى هوتا هے اور وه مومن بن جاتے هیں، جیسے : رسول ترک جس نے امام حسین (ع) کے توسط سے نجات پائى هے­[وضاحت : مشهور هے که توبه سے پهلے رسول ترک، کو کسى شخص نے خواب میں کتے کى صورت میں امام حسین (ع) کے خیموں کى نگهبانى کرتے هوئے دیکھا تھا که یه کتا امام حسین (ع) کے خیموں میں غیروں کو داخل هونے سے روکتا تھا­ اس خواب کو بیان کرنا اس شخص میں ایک عظیم باطنى تبدیلى پیدا هونے کا سبب بنا اور اس نے توبه کى اور توبه کرنے کے بعد بلند معنوى مقام پر فائز هوا]لیکن سوال یه هے که امام حسین (ع) نے کیوں رسول کو اپنے گھر کے دروازے کے کتے کى صورت میں قبول فرمایا، میرا مراد یه هے که اس کو کیوں امام (ع) نے کتے کى صورت میں قبول کیا، کیا انسان کا مقام بلند نهیں هے، پس امام (ع) نے کیوں اسے خواب میں اپنے نگهبان کتے کى شکل میں قبول کیا ­ البته رسول ترک کے دوستوں سے میرا رابطه هے اور میں نےاس کے امام حسین (ع) کے توسط سے نجات بانے کى کتاب پڑھى هے؟؟!

[1] امام خمینی، تحریرالوسیله، کتاب الهبه، مسئله ۸

تبصرے
Loading...