جنات، ارواح اور شیطانوں کو تسخیر کرنے کا کیا حکم هے ؟

0 0

هر چند سحرو جادو کی تعریف اور اس کے مواد کے سلسله میں فقه و لغت کی کتابوں میں بهت سی تعریفیں کی گئی هیں ، لیکن یه چیز مسلمات میں سے هے که جنات ، ارواح اور شیاطین سے رابطه کا نام سحر و جادو هے



[1]


تاریخ انسانیت میں جادوگری قدیم الایام سے هے ، جس کے اور زمانه اس وقت هوتا تھا جب انبیاء (علیهم السلام) معاشرے میں نهیں هوتے تھے یا ان کی حاکمیت کم تھی لهذا ان (جادوگروں) کی کثرت حضرت نوح علیه السلام



[2]



اور حضرت سلیمان علیه السلام



[3]


کے بعد رهی هے ، مگر جیسا که جادوگری کی تاریخ ،جنات ،ارواح اور شیاطین کا ناقص علم



[4]



اور ان کے رابطه کا جھوٹا دعویٰ کرنے والوں کی تاریخ گواه هے که جادوگروں نے انسانی سماج میں بهت هی زیاده ضرر پهنچایا هے چاهے دینی ضرر هو یا معنوی ضرر۔

لهذا همارے عقیده میں جنات ، ارواح اور شیاطین تک رسائی کے راستے بھی دین کے خلاف هیں



[5]



اور جو معلومات یه دیتے هیں اور جو اثر یه ڈالتے هیں یه بھی دیں کے خلاف هے اور اکثر ایسا هوا هے که جادوگروں نے نبوت یا مهدویت کا دعویٰ کیا هے



[6]


انسان کی سعادتمندی اس میں هے که اس کی دوستی ، دشمنی ، خوشی ، ناخوشی اور اس کا سونا، جگنا، سفر اور حضر ، سب ﮐﭽﮭ دنیوی و اخروی مصلحتوں کی بنیاد پر هو ، لیکن جادوگری کی تاریخ میں اس کے برعکس هے



[7]



۔

دوسرے یه که جنات و شیاطین کے مسخر کرنے اور روحوں کا حاضر کرنے میں ایک طرح سے اراده اختیار کو سلب کر کے ان پر یا جن عورتوں یا بچوں کے ذریعه یه (ارواح و شیاطین) حاضر هوتے هیں جبر اور اکراه هے جو خود ایک قسم کی اذ یت اور ضرر هے



[8]


مزید  قناعت کے زندگی میں کیا نتائج ہوتے ہیں اور اس کو بخل اور کنجوسی سے الگ کیسے مشخص کیجا سکتا ہے ؟

نتیجه یه نکلا که چوں که جنات ، ارواح اور شیاطین کی معلومات بھی محدود هے



[9]



اور ان کے اثرات بھی محدود هیں



[10]



۔ دوسرے یه که اگر یه معلومات اور اثرات شیطان کی جانب سے هوں گے اور شیطان کا کام بھی گمراه کرنا اور باطل کو مزین کرنا هے لهذا



[11]



ان تعلقات و روابط کا کوئی بھروسه نهیں هے ۔۔

مزید معلومات کے لیئے ذیل کے عنوانات کی طرف رجوع کریں :


1. جنات سے انسان کا رابطه ، سوال نمبر556

2. دوسرے عوامل کے موجودات سے رابطه ، سوال نمبر 3116 (3389)

3. شیطان و جنات کی قدرت و طاقت ، سوال نمبر 2275 (2458)







[1]



 

 شرح مکاسب محرمه مزجی ، ج 2 ، ص67






[2]



 

 امام حسن عسکری (علیه السلام) ((حضرت نوح کے بعد جادوگروں کی کثرت هوگئی )) وسائل ، ج 12 ، ص106






[3]



 

 تفسیر المیزان ، ج 1 ، ص 237






[4]



 

 تفسیر المیزان ، ج 15 ، ص330






[5]



 

 شرح مکاسب محرمه مزجی ، ج 2 ، ص67






[6]



 

 شرح مکاسب محرمه مزجی ، ج 2 ، ص67






[7]



 
شرح مکاسب محرمه مزجی ، ج 2 ، ص 69






[8]



 

 شرح مکاسب محرمه مزجی ، ج 2 ، ص 69






[9]



 

 الاحتجاج ، ج 2 ، ص 81






[10]



 

 الاحتجاج ، ج 2 ، ص 81






[11]



 

 سوره نساء /60 ، اور شیطان سے متعلق بے شمار دوسری آیتیں ۔

مزید  کیا فقر وجودی صرف معلول کی علت فاعلی کی نیازمندی کا معیار ہے؟ یا علت تامہ کے لئے بھی کافی ہے؟ فلسفی مفاہیم کے کیوں جنس و فصل نہیں ہیں؟ وغیرہ
تبصرے
Loading...